پاکستان

اسحاق ڈار کا بی بی سی کا انٹرویو جھوٹ سے بھرا ہوا تھا: وزیر اعظم عمران خان

وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پیر کو اسحاق ڈار کا بی بی سی کو انٹرویو جھوٹ سے بھرا ہوا تھا ۔

نومنتخب گلگت بلتستان کابینہ کی تقریب حلف برداری سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ وہ 40 سالوں سے نواز شریف اور آصف علی زرداری کو جانتے ہیں۔ اللہ نے ان دونوں کو سزا دی اور اب وہ اپنی ناجائز دولت کو بچانے کے لئے لندن اور دبئی بھاگ رہے ہیں۔ وہ بڑھتی ہوئی وبائی بیماری کے باوجود اپنی لوٹ مار کو بچانے کے لئے ریلیاں نکال رہے ہیں۔

وزیر اعظم نے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے امید ظاہر کی کہ گلگت بلتستان کی نئی حکومت موثر حکمت عملی اپناتے ہوئے صوبے میں حکمرانی کے تازہ معیارات قائم کرے گی۔

وزیر اعظم نے گلگت بلتستان کو الگ صوبہ بنانے کے لئے فوری طور پر کمیٹی بنانے کا وعدہ کیا۔ انہوں نے بتایا کہ ٹیم جلد از جلد ٹائم لائن پر عمل کرے گی اور رپورٹ پیش کرے گی۔

جی بی کے لوگوں کی ترقی اور فلاح و بہبود کے اپنے منصوبے کی نقاب کشائی کرتے ہوئے ، عمران خان نے کہا کہ موجودہ حکومت کا ایہاساس پروگرام ، جو پاکستان کی تاریخ کا سب سے بڑا غربت مٹانے والا پروگرام ہے ، جی بی میں بھی متعارف کرایا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ جی بی کے تمام لوگوں کو صحبت انسداد کارڈ کے اجراء کے ساتھ ہیلتھ انشورنس فراہم کیا جائے گا جس کے تحت وہ کسی بھی اسپتال میں دس لاکھ روپے تک مفت طبی سہولت حاصل کرسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ گلگت میں زیر تعمیر 250 بستروں پر مشتمل ہسپتال مکمل ہوگا۔

وزیر اعظم نے گلگت بلتستان کو سیاحت کے ایک مرکز میں تبدیل کرنے کے عزم کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ لوگوں کو سیاحوں کے لئے رہائش گاہوں پر کمرے بنانے میں ان کی مدد کے لئے آسان قرضے فراہم کیے جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ 300 میگاواٹ ہائیڈرو بجلی پیدا ہوگی ، جو اس خطے کے لئے کافی سے زیادہ ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ دو ہائیڈرو بجلی گھر تعمیر کیے جارہے ہیں۔ دو دیگر پائپ لائن میں ہیں جبکہ دو مزید افراد کی منظوری دے دی گئی ہے۔ اس کے علاوہ انہوں نے کہا کہ مائکرو ہائیڈرو پاور اسٹیشن بھی قائم کیے جائیں گے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ جی بی میں خصوصی اقتصادی زون بھی تعمیر کیا جائے گا جہاں صنعتیں نقل مکانی کریں گی۔

پی ٹی آئی کے وژن کی وضاحت کرتے ہوئے ، عمران خان نے کہا کہ وہ معاشرے کے تباہ حال طبقے کے معیار زندگی کو بلند کرنے پر مرکوز ہیں۔ انہوں نے کہا کہ خیبر پختونخوا کے ضم شدہ اضلاع ، اور بلوچستان سمیت پسماندہ علاقوں کی ترقی ان کی حکومت کی ترجیح ہے۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button