پاکستان

مفرور ملزمان کی گرفتاری کے لئے قانون کے مطابق اقدامات اٹھائے جائیں: چیئرمین نیب

چیئرمین قومی احتساب بیورو (نیب) جسٹس (ر) جاوید اقبال نے کہا ہے کہ قومی ادارہ بدعنوان عناصر کو انصاف کے کٹہرے میں لانے کے لئے پرعزم ہے۔

تفصیلات کے مطابق نیب کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ چیئرمین نے ایک اعلی سطح کا اجلاس طلب کیا ہے جس میں ڈپٹی چیئرمین ، پراسیکیوٹر جنرل اور ڈی جی شریک ہوں گے۔

چیئرمین کی طرف سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ نیب واحد ادارہ ہے جس نے سی پی ای سی کی نگرانی کے لئے چین کے ساتھ مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کیے۔ اس کے علاوہ ہائیر ایجوکیشن کمیشن کے ساتھ مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کیے گئے تاکہ نوجوانوں کو بدعنوانی کے مضر اثرات سے آگاہ کیا جاسکے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان سارک اینٹی کرپشن فورم کا پہلا چیئرمین ہے ، جو نیب کی عمدہ کارکردگی کا اعتراف ہے۔ نیب آرڈیننس 1999 کے اقتباسات نیب کو بدعنوانی کے خاتمے اور چوری شدہ رقم کی وصولی کی ذمہ داری دیتے ہیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ نیب کو ابتداء سے ہی بدعنوان عناصر سے لوٹی گئی 4666 ارب روپے ملی ہیں اور اسے قومی خزانے میں جمع کرائیں۔ نیب کیسز میں سزا کی شرح ملک کی کسی بھی دوسری اینٹی کرپشن ایجنسی سے بہتر ہے۔

بیان میں واضح کیا گیا ہے کہ نیب کا تعلق کسی سیاسی جماعت ، گروپ یا فرد سے نہیں بلکہ صرف ریاست پاکستان سے ہے۔

چیئرمین نیب نے ہدایت کی ہے کہ مفرور ملزمان کی گرفتاری کے لئے قانون کے مطابق اقدامات اٹھائے جائیں۔ بدعنوان عناصر کو انصاف کے کٹہرے میں لایا جائے ، جہاں قانون اپنا راستہ بنائے گا۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button