کالم

بھارت کی پاکستان میں پھر دہشت گردی

سابق بھارتی میجر گوروآریاکا کہنا تھا کہ میں اعتراف کرتا ہوں کہ بلوچستان میں دہشت گرد میرے دوست ہیں اور ان کے فون نمبرزمیرے فون میں محفوظ ہیں، میں ہر روزان سے گفتگو کرتا ہوں ہندو اڑہ کا بدلہ بلوچستان میں لیں گے۔ میجر گورو آریا کا اعترافی بیان ٹی وی پر نشر ہو چکا ہے۔ جبکہ وزیرِ خارجہ شاہ محمودقریشی نے اس دہشت گردی پر بیان پر ردِ عمل دیاکہ بلوچستان میں بھارتی دہشت گردی ایک حقیقت ہے جسے روکنے کے لیے اتفاق ضروری ہے دنیا اسکا نوٹس لے۔انہوں نے مزید کہاکہ بھارت کی بلوچستان میں شرپسندی اور امن دشمن گروہوں کی پشت پناہی کسی سے ڈھکی چھپی نہیں ہے۔ایک دن کھلے عام پاکستان کو دھمکی دی جاتی ہے اور اگلے روزہمارے جوان شہید ہو جاتے ہیں۔ وزیرِ خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ بلوچستان کی بلوچ اور پختون قیادت کو وزارت خارجہ آنے کی دعوت دیتا ہوںبلوچستان کے قائدین چاہیں گے تو بلوچستان میں بھی جانے کو تیار ہوں۔انہوں نے کہا کہ ایس سی اوکا اجلاس قریب ہے اور اس میں موقع ملا تو بھارت کے رویے کے خلاف آواز ضرور اٹھاوں گا۔سابق بھارتی میجرکے اعتراف سے یہ باتیں ثابت کرتی ہیں کہ بلوچستان میں دہشت گردی بھارت کروا رہا ہے۔ وفاقی وزیر فوادچوہدری نے بھی دہشت گردی کے اس حملے کے عوض رد عمل میں کہا کہ سابق بھارتی فوجی پھر بلوچستان میں دہشت گردی کا اعتراف کر رہا ہے، مہذب دنیا جاگے اور اسکا نوٹس لے۔
بلوچستان میں کیچ کے مقام پر سڑک پر بارودی سرنگ کا دھماکہ جس سے فوج کے جوان شہید ہوگئے،پاک فوج کے یہ جوان سرحد پر باڑ لگانے کی نگرانی کے بعد واپس آرہے تھے تو ضلع کیچ کے علاقہ بلیدہ میں سڑک پر چھپائی ہوئی بارودی سرنگ کے پھٹنے سے شہید ہوگئے اور گاڑی تباہ ہو گئی۔ کچھ روز پہلے بھارت کے سابق نائب صدرمحمد احمد انصاری نے کہاہے کہ بھارت میں ایک بہت ہی خطرناک کھیل چل رہا ہے ہمیں جاگنا ہوگا کیونکہ ہمارے ادارے شدید خطرے میں ہیں۔جن اصولوں پر آئین کی تشکیل اور تمہیدپیش کی گئی تھی انہیں کوڑے دان میں ڈال دیا گیا۔ مقبوضہ کشمیر میں حریت پسندوں کے حملے سے ایک میجر اور چار فوجی ہلاک ہو گئے،بھارتی وزارتِ داخلہ کے ترجمان نے اعلان کیا تھا کہ پاکستان سے فوری انتقام لیا جائے گااسکے بعد کیچ کے علاقہ بلیدہ میں سڑک پر بارودی سرنگ کا دھماکہ ہو گیا۔
بلوچستان میں ہونے والی دہشت گردی میں شہید ہونے والے میجر ندیم عباس اور نائیک جمشید کو پورے فوجی اعزاز کے ساتھ سپردِ خاک کر دیا گیا۔اللّٰہ تعالیٰ ان کی شہادت قبول فرمائے اور ان کے لواحقین کو صبر جمیل کی نعمت سے نوازے۔شہید ہمیشہ زندہ ہوتا ہے،وردی میں مسلمان ملک کی حفاظت اور سرحدی نگرانی کے طور پر جو دہشت گردی کا نشانہ بنتے ہیں وہ زندہ شہید ہوتے ہیں اللہ تعالی ان شہیدوں کی شہادت کے فیوض و برکات پوری پاکستانی قوم اور افواج پاکستان پر قبول فرمائے، ان کی شہادت کا درجہ اس لیے بھی زیادہ محسوس ہوتا ہے کہ وہ رمضان المبارک میں دفاع مسلمان سر زمین کے عمل میں شہید ہوئے۔
یہ بات قابل ذکر اور اہم ہے کہ ضلع کیچ کی سرحد ایران سے ملتی ہے ایر ان سے ہی بھارتی جاسوس کلبھوشن اور را کے اہلکاربلوچستان میں داخل ہوتے رہتے ہیں سینکڑوں کلو میٹر پاک ایران سرحد پر دہشت گردی کی آمد روکنے کے لیے باڑ لگائی جا رہی ہے۔ بھارت مقبوضہ کشمیر میں آزادی کی تحریک پر قابو نہیں پا سکا، وہاں 9 ماہ سے زیادہ عرصہ سے مکمل کرفیو نافذہے، سینکڑوں گرفتارجبکہ درجنوں شہید اور زخمی کر دئیے گئے۔مقبوضہ کشمیر میں فوجیوں کی ہلاکت کے بعدپاکستان میں کارروائی کا منظرواضح ہے، بھارتی میڈیا میں اس واقعہ کی کوئی خبر موجود نہیں، بھارتی میڈیا کے ساتھ ساتھ عالمی دنیا بھی بھارت کے مذموم عزائم پر خاموش ہے جو کہ ایک تشویشناک بات ہے۔

بقلم کاشف شہزاد

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button